New, Insurance, Public, Government, Daily, Property, Rents

جنگ اب بیماروں اور کمزوروں سے ہوگی

انڈیا میں علاج کی سہولیات اور ہسپتال وغیرہ کا نظام اتنا جدید، کامیاب اور بہترین ہے کہ امریکہ، یورپ اور ایشیا کے کئی ممالک کے لاکھوں لوگ ہر برس انڈیا میں علاج کی غرض سے آتے ہیں۔
پاکستان اور انڈیا میں لفظوں کی جنگ عروج پر
ان گنت بری خبروں میں ایک اور کا اضافہ
علاج کے لیے یہاں آنے کا ایک سبب یہ بھی ہے کہ یہاں علاج کا عالمی معیار ہوتے ہوئے بھی یہ یورپ اور امریکہ کے مقابلے بہت سستا ہے۔
غیر ممالک سے آنے والے مریضوں کی تعداد ہر برس بڑھتی جا رہی ہے۔ کئی ہسپتالوں نے مریضوں کی سہولت کے لیے عربی ، فارسی اور بعض افریقی زبانوں کے مترجم بھی مقرر کیے ہیں۔ سال 2015 اور 2016 میں تقریـباً پانچ لاکھ غیر ملکی مریض علاج کے لیے انڈیا آئے۔
ان مریضوں کی تیمارداری کے لیے رشتےدار بھی ان کے ہمراہ یہاں آتے ہیں۔ گزشتہ برسوں میں یہ طبی سیاحت کئی ارب ڈا لر کی صنعت بن گئی ہے ۔
غیر ممالک سے آنے والے مریضوں میں ہزاروں مریض ہمسایہ ملک پاکستان سے بھی آتے ہیں۔ ان میں بیشتر جگر اور بچوں کے دل کے علاج کے لیے ممبئی، چننئی اور دلی آتے ہیں لیکن گزشتہ فروری میں اچانک ان مریضوں کی تعد اد کم ہوگئی ۔
بھارت اور پاکستان کی سفارتی جنگ اب عوام تک پہنچ چکی ہے اور پچھلے دومہینے میں پاکستانی مریضوں کا آنا بالکل بند ہو گیا ہے کیونکہ بھارت کی حکومت نے پاکستان سے آنے والے مریضوں کو ویزا دینا بند کر دیا ہے۔
پاکستان میں بھارتی بحریہ کے ایک سابق اہلکار کلبھوشن جادھو کو جاسوسی اور تخریب کاری کے جرم میں موت کی سزا سنائے جانے کے بعد بھارت کی حکومت نے پاکستانی مریضوں کے لیے یہ شرط عائد کر دی کہ صرف ان مریضوں کو ویزا دیا جائے گا جن کے پاس پاکستان کے خارجی امور کے مشیر سرتاج عزیز کا سفارشی خط ہو گا۔


loading...