New, Insurance, Public, Government, Daily, Property, Rents

آزاد درخت

حضرت شیخ رحمتہ اللہ علیہ بیان کرتے ہیں کہ ایک بڑے مشہور عقل مند اور معاملہ فہم سے لوگوں نے دریافت کیاکہ جن درختوں کو اللہ عزوجل نے پھل دار کیا اور بلند کیا ہے ان میں صرف سرو کے درخت کو ہی کیوں آزاد کہتے ہیں ؟ حالانکہ اس پر پھل نہیں لگتا ۔
اس معاملہ فہم اور عقل مند نے جواب دیاکہ دوسرے تمام پھل دار درخت ایک مقررہ وقت تک پھل دیتے ہیں ۔ پھل لگ جائے تو تازہ ہوجاتے ہیں اور پھل نہ لگے تو ان کی تروتازگی ختم ہوجاتی ہے اور سرو کے لئے ایسی کوئی بات نہیں اس لئے وہ ہروقت خوش رہتا ہے اورآزاد لوگوں کی صفت بھی یہی ہے کہ جوشے گزرگئی اس سے دل کوکیوں جلانا؟ دریائے دجلہ توبغداد میں خلیفہ کے سامنے بھی بہتا ہے اگر ہوسکے تو کھجور کی طرح مہربان ہوجاؤ اور اگر نہ ہوسکے تو سرو کی طرح آزاد ہوجاؤ۔


loading...